تازہ ترین  

”قلم اور تاثرات“ کی تقریب رونمائی
    |     4 weeks ago     |    گوشہ ادب
صاحبو مجھ جیسے فقیر اور طفل مکتب کے لئے مطالعہ حصول ِ علم کا ذریعہ ہے۔اچھی کتب کا ذخیرہ ہی مطالعہ کی پیاس بجھا سکتا ہے۔موجودہ دور علم و ادب کی ترقی کا زمانہ ہے۔ ہر موضوع پر اچھی سے اچھی کتاب بازار میں دستیاب ہے۔ہمارے شاعر اور ادیب ادب کے گراں بہا سرمائے میں برابر اضافہ کر رہے ہیں۔ادب کے اس سرمائے میں اضافہ کرنے میں ہمارے پیارے دوست ڈاکٹر چوہدری تنویر سرور صاحب جو کہ پیشے کے اعتبار سے طبیب ہیں اردو ادب اور صحافت سے بے حد لگاؤ رکھتے ہیں۔ دوستوں کے دوست ہیں۔ اپنے حلقہ احباب میں شامل سب کو محبت بانٹتے ہیں بھی اپنی خدمات وقف کر رہے ہیں۔ڈاکٹر صاحب اپنی دکان پر محبت کا سودا بیچتے ہیں جس کی قیمت خلوص اور چاہت ہے۔یہ ہی وجہ ہے کہ ڈاکٹر چوہدری تنویر سرور صاحب کے گاہکوں میں ہر روز اضافہ ہوتا چلا جاتا ہے۔ہر گاہک اپنے دل میں ڈاکٹر صاحب کے لئے خلوص اور چاہت لئے ان کی دکان پر محبت لینے آجاتا ہے جس میں خود یہ فقیر بھی شامل ہے۔اسی محبت کو لینے کے واسطے گزشتہ دنوں 18 جنوری 2020؁ ء بروز ہفتہ کو ڈاکٹر چوہدری تنویر سرور صاحب کی ساتویں کتاب ”قلم اور تاثرات“ کی رونمائی جو کہ الحمراء ادبی بیٹھک لاہور میں منعقد ہوئی میں راقم نے شرکت کی۔اس پر وقار اور یاد گار تقریب کا انعقاد ایف جے رائٹرز فورم پاکستان اور بزم بشیر رحمانی کے زیر سایہ ہوا۔تقریب کی صدارت معروف سنیئر شاعر و ادیب ممتاز راشد لاہوری صاحب نے کی جبکہ مہمانان خصوصی میں سنیئر اداکار و شاعرپرائڈ آف پر مارمنس راشد محمودصاحب، ایڈیٹر ماہنامہ پھول جناب شعیب مرزا صاحب، ماہر تعلیم محترمہ ڈاکٹر فضیلت بانو صاحبہ،شاعرو مصنف چیئر مین بزم بشیر رحمانی جناب محمد نوید مرزاصاحب اور شاعر و مصنف سر پرست اعلیٰ وفائے پاکستان ادبی فورم جناب حاجی محمد لطیف کھوکھر صاحب شامل تھے۔تقریب کے مہمانانِ اعزاز جناب نذیر انبالوی صاحب، جناب حسیب اعجاز عاشر صاحب اور محترمہ صباء ممتاز بانو صاحبہ تھیں۔ اس خوبصورت تقریب میں نظامت کے فرائض نہایت عمدگی کے ساتھ جناب محمد نواز کھرل نے ادا کئے۔تقریب کا آغاز تلاوت کلام پاک سے کیا گیا اور تلاوت کی سعادت کالم نگار جناب حافظ محمد زاہد نے حاصل کی۔بار گاہ رسالت ﷺ میں ہدیہ نعت پروفیسر نذر بھنڈصاحب اور نوجوان شاعرو نعت خواں جواد احمد راسخ نے پیش کیا۔”قلم اور تاثرات“ پر گفتگو کا آغاز حسب سابق راقم سے ہی کیا گیا اور راقم نے اپنی گفتگو میں جو کچھ کہا وہ کچھ یوں تھا۔”کتاب ”قلم اور تاثرات“ ڈاکٹر چوہدری تنویر سرور صاحب کی مجموعی طور پر ساتویں کتاب ہے۔ اس سے پہلے ان کی پانچ کتابیں کمپیوٹر اور طب کے موضوعات پر اور ایک کتاب اردو ادب اور صحافت میں ان کے کالموں کا مجموعہ اور ”قلم اور کالم“ کے نام سے منظر عام پر آکر اپنا آپ منوا چکی ہیں۔اس کتاب میں ڈاکٹر صغراء صدف صاحبہ، ایثاررانا صاحب اور ندیم نظر صاحب کے تاثرات کے ساتھ صاحب کتاب کے پیش لفظ کے علاوہ ستائیس (27) کے قریب ایسے موضاعات پر کالم شامل ہیں جو ہمارے معاشرے میں موجود خوبیوں اور خامیوں کی نشاندہی کرتے ہیں۔اپنی ان تحریروں میں ڈاکٹر صاحب جہاں مناسب سمجھتے ہیں خامیوں اور برائیوں پر تنقید کا ٹیکہ بھی لگاتے ہیں اور پھر ان خامیوں کو دور کرنے، ان برائیوں کو ختم کرنے اور مسائل کے حل کی میٹھی گولیاں بھی دیتے ہیں۔اس کتاب کے دوسرے حصہ میں سولہ (16) مضامین صحت اور طب کے حوالے سے ہیں جس میں ڈاکٹر صاحب ہمیں علاج بلغذا کا بتاتے ہیں۔ ہم اپنی روزمرہ کی خوراک میں عام اورچھوٹی چھوٹی غذائی اجزاء سے اپنی صحت کا خیال رکھ سکتے ہیں۔اس کتاب میں شامل ڈاکٹر صاحب کی تحریرں ملک پاکستان کے متعدد بڑے اخبارات میں شائع ہو چکی ہیں اور آج ایک گلدستہ کی صورت ”قلم اور تاثرات“ کے نام سے ہمارے ہاتھوں میں ہے۔ایسا گلدستہ بنا کر منظر عام پر لانے پر یقینا چوہدری تنویر سرور صاحب اور اس کتاب کے پبلشر مبار کباد کے مستحق ہیں۔۔۔ان کو مبار ک باد نا دینا میری اخلاقی کنجوسی ہوگی۔۔۔بھلا میں کیو ں بننے لگا کنجوس۔۔۔۔مبارکباد ڈھیر وں مبارک باد ”قلم اور تاثرات“ کی اشاعت پر“راقم کے بعد جن شخصیات نے کتاب اور صاحب کتاب پر لب کشائی کی ان میں محمدطاہر تبسم درانی،محمد افتخار خان،اور سنیئر صحافی عدنان عالم نے صاحب کتاب اور کتاب میں شامل کالمز اور مضامین کے موضاعات اور تحریر کی پختگی کے حوالے سے بات کی اور صاحب کتاب کو کتاب کی اشاعت پر مبارک باد پیش کی۔مہمانان ِ اعزاز میں حسیب اعجاز عاشر نے حاضرین سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کتاب میں شامل کالموں کے موضوعات ایسے ہیں کہ ڈاکٹر صاحب نے معاشرے کے تمام معاشرت پہلوؤں کا احاطہ کر دیا ہے جس پر ڈاکٹر چوہدری تنویر صاحب داد کے مستحق ہیں۔جناب نذیر انبالوی صاحب نے اپنے خطاب میں صاحب کتاب کو کتاب کی اشاعت پر مبار ک باد پیش کی اور کتاب میں شامل صحت کے حوالے سے مضامین جن میں مکھن کے فوائد، ماں کے دودھ کی افادیت، کالی مرچ کی خصوصیات، بادام کے فوائد، اخروٹ کے فوائد، دار چینی کے فوائد کو سراہا اور کہا کہ یہ مضامین بڑوں اور بچوں دونوں کے مطالعے میں فائدہ مند ہیں۔بڑے یہ مضامین پڑھ کراس پر عمل کر کے اپنی اور بچو ں کی صحت کا خیال رکھ سکتے ہیں اور بچے بھی اپنی معلومات میں اضافہ کرتے ہوئے اپنی صحت کا خود خیال رکھ سکتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ڈاکٹر چوہدری تنویر سرور کی اپنی ماں سے محبت کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ انہوں نے اپنے پبلشنگ ہاؤس کا نام اپنی والدہ کے نام سے اپنے یو ٹیوب چینل کا نام اپنی والدہ ے نام سے رکھا۔اللہ پاک ہر ایک کو اپنے والدین سے محبت اور حسن سلوک کی توفیق دے۔محمد نوید مرزا صاحب نے ”قلم اور تاثرات“ پربات کرت ہوئے کتاب میں شامل تحاریرپر تفصیلی روشنی ڈالی۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ کتاب صرف کالموں کا مجموعہ نہیں بلکہ کالموں اور مضامین کا مجموعہ ہے۔مہمانان ِ خصوصی میں سے ایڈیٹر ماہنامہ پھول جناب شعیب مرزا صاحب نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مجھے خوشی ہوتی ہے جب کسی لکھاری کی تحریر چھپتی ہے اور سب سے زیادہ خوشی مجھے اس وقت ہوتی ہے جب لکھاری کی کتا ب شائع ہوتی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ تقریب میں لکھاری احباب شریک ہیں آپ سب مل کر بچوں کا ادب تخلیق کریں۔ایسی تحریریں قلم بند کریں جس سے ہمارے بچوں کو ماں باپ کی عزت کرنا، ان کا احترام کرنا آئے۔ وفائے پاکستان ادبی فورم کے سرپرست اعلیٰ حاجی محمد لطیف کھوکھر صاحب نے حاضرین سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ”قلم اور تاثرات“ ایک ایسی کتاب ہے جو ہر گھر میں ہونی چاہیئے جس سے گھر کے افراد نا صرف معاشرے کے مختلف پہلوؤں سے آشنا ہوں گے ساتھ ہی صحت کے حوالے سے مفید ٹوٹکے بھی حاصل کر سکیں گے۔پرائڈآف پر فارمنس راشد محمود صاحب نے اپنے خطاب میں بتایا کہ آج انہوں نے فلم کی ریکارڈنگ (شوٹنگ) پر جانا تھا لیکن وہ شوٹنگ سے خاص طور پر چھٹی لے کر آئے ہیں کہ مجھے اپنے خاص دوست کی کتاب کی رونمائی تقریب میں شرکت کرنے جانا ہے۔انہوں نے کتاب میں شامل تحریروں کے اسلوب اور صحت کے مضامین کو بے حد سراہا اور صاحب کتاب کو مبار ک باد دیتے ہوئے دعا دی کہ ایسے ہی ادب کی خدمت کرتے رہیں۔صاحب کتاب ڈاکٹر چوہدری تنویر سرور صاحب نے تقریب کے شرکاء تقریب میں شرکت کرنے پر شکریہ ادا کیا اور کہا کہ یہ سب آپ احباب اور دوستوں کی، والدین اور بزرگوں کی دعاوں کا ہی ثمرہے کہ آج میں سات کتابوں کا مصنف ہوں، اور آئندہ آنے والی کتاب صحافت کے طالب علموں کے لئے ہو گی اور اس کے ساتھ ساتھ جن شخصیات کا انٹرویو کر چکا ہوں اس کا مجموعہ بھی زیر ترتیب ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ ایف جے رائٹرز فورم کے پلیٹ فارم سے ہر سال لکھاریوں جس میں سنیئر اور جونیئر سب شامل ہوں گے کو کارکردگی کی بنیاد پر اچیومنٹ اور بیسٹ پرمارمنس ایوارڈ دیئے جائیں گے۔ اس سلسلے میں اس سال کے ایوارڈ آج کی تقریب میں دیئے جائیں گے۔
تقریب کے صاحب صدر جناب ممتاز راشد لاہوری نے اپنے صداراتی خطبہ میں تمام ایوارڈ حاصل کرنے والوں کو مبار کباد پیش کی اور صاحب کتاب ڈاکٹر چوہدری تنویر سرور کو کتاب کی اشاعت پر مبار ک باد پیش کی۔ان کا کہنا تھا کہ ڈاکٹر چوہدری تنویر سرور ادب اور صحافت کی دنیا کا ایک ایسا چمکتا تارا ہے جس کی روشنی سے سب فائدہ حاصل کر سکتے ہیں۔تقریب میں گزشتہ برس ادب اور صحافت میں نمایاں کارکردگی دکھانے والی اٹھائیس (28)شخصیات کو ایف جے رائٹرز فورم پاکستان کی طرف سے اچیومنٹ ایوارڈ اور بیسٹ پر فارمنس ایوارڈ سے نوازا گیا۔ تقریب کے اختتام پر تما شرکاء کی گرم چائے اور بسکٹ سے تواضع کی گئی یو ں یہ تقریب وقت کی رگ پہ لمحوں کو گواہ بنا کر اختتام پذیر ہوئی۔
..........
تحریرو ترتیب: محمد شہزاد اسلم راجہ 
 For Feed back: 
shehzad_raja2002@yahoo.com 
Contact Number:  03337104102





Comments


There is no Comments to display at the moment.



فیس بک پیج


اہم خبریں

تازہ ترین کالم / مضامین


نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2018 apkibat. All Rights Reserved