تازہ ترین  

کتاب رحمت ِ دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ایک جائزہ
    |     1 week ago     |    گوشہ ادب
اسلامی ریاست میں تمام اقلیتوں اور رعایا کو عقیدہ ،مذہب ،جان ومال اور عزت و آبرو کے تحفظ کی ضمانت حاصل ہے ۔وہ انسانی بنیاد پر شہری آزادی اور بنیادی حقوق میں مسلمانوں کے برابر شریک ہیں ۔قانون کی نظر میں سب کے ساتھ یکساں معاملہ کرنے کا حکم ہے کہ بحیثیت انسان کسی کے ساتھ کوئی امتیاز روا نہ رکھا جائے گا ۔
یہ اقتباس کتاب ’’رحمت ِ دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ‘‘سے لیا گیا ہے جس کی مصنفہ ہیں محترمہ نبیلہ اکبر صاحبہ۔میں حیران ہوں جس ریاست میں غیر مسلم کا یہ مقام ہو وہاں ایک مسلم بھائی دوسرے مسلم بھائی کا قتل کر ے ،عزتیں پامال ہوں ،چوری ،بددیانتی ،زناکاری جیسے جرائم کثرت سے ہو رہے ہوں اس معاشرے کا انجام کیا ہو گا ۔؟آج سے چودہ سو سال پہلے ہمارے آقا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ایک نظام دے کر گئے جس پر عمل پیرا ہو کر ہم دنیاوی اور آخروی نجات حاصل کر سکتے ہیں ۔لیکن۔۔
محترمہ نبیلہ اکبر صاحبہ خوش قسمت ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے انہیں اس موضوع پر قلم اٹھانے کی طاقت عطا کی اور ان کی پہلی کتاب ہی ’’رحمت ِ دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ‘‘کے سیرت و کردار پر ہے ۔آج وقت کی اہم ضرورت ہے کہ ہم حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے اسوہ حسنہ پر عمل پیرا ہو کر امن بھری زندگی بسر کریں ۔
مجھ پر اللہ تعالیٰ کا خاص کرم ہے کہ میں جب زندگی کے خرافات سے تھکنے لگتا ہوں تو اللہ تعالیٰ کی طرف سے میرے دل میں محبت رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا سمندر ٹھاٹھیں مارنے لگتا ہے اور بے اختیار زبان پر دورد شریف کا ورد شروع ہو جاتا ہے ۔اس ذات پر جس پر جمادات ،نباتات ،پتھروں کی تہہ در تہہ رہنے والے ،آسمانوں کی بلندیوں کو چُھونے والے ہر خاص و عام ،ادنی و اعلیٰ انسان بلکہ فرشتے بھی حتی کہ خود خدا بھی اپنے محبو ب صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درودشریف بھیجتا ہے ۔آپ بھی ورد رکھا کیجئے زندگی سہل ہو جائے گی ۔
اللہ تعالیٰ کامجھ پر خاص کرم یہ بھی ہے کے اُس نے مجھے کتاب دوست بنایا ہے اور میں اس دوستی میں پور پور ڈوب چکا ہوں ۔صبح و شام ،دوپہر کتابوں میں رہتا ہوں ۔قرآن مجید، فرقان حمید کے ساتھ ساتھ مختلف کتابیں میرے ساتھ محو گفتگو رہتی ہیں ۔گزشتہ دنوں جو کتاب میرے زیر مطالعہ رہی اس کا نام ’’رحمت ِ دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ‘‘ہے جس کو نبیلہ اکبر نے لکھ کر اپنی دُنیاوی اور آخروی زندگی کا بہترین ساماں کر لیا ہے ۔اس سے بھلا اور بڑی سعادت کی بات کیا ہو سکتی ہے کہ رب رحمان نے اپنے محبوب کی زندگی پر کتاب ان ہاتھوں سے لکھوائی ہے ۔نبیلہ اکبر داد تحسین اور مبارک باد کی مستحق ہیں اور اللہ تعالیٰ کی رحمتوں اور نعمتوں سے نوازی گئیں ہیں ۔
کتاب کا سرورق شاندار اور کمال ہے۔اس کی اشاعت فروری 2019افکار زاہدی پبلشرر اینڈ پرنیٹرز کی جانب سے ہوئی ہے ۔کتاب کی کوئی قیمت نہیں ہے واقعی اس کتاب کی کوئی قیمت ہو بھی نہیں سکتی ۔یہ انمول کتاب تحفۃًملتی ہے ۔کتنا خوش نصیب ہے وہ شخص جس کو یہ کتاب ملتی ہے اور وہ مکمل جان فشانی سے اسے پڑھتا ہے اور اپنی زندگی کے شب وروز سنوارتا ہے ۔
میں خود کو خوش قسمت ترین شخص سمجھتا ہوں کہ مجھے یہ کتاب ’’ابن یوسف ‘‘کے توسط سے ملی اور اس کو پڑھنے کا فیض حاصل ہوا ۔اس کو پڑھتے ہوئے میں خود بھی ان مناظر میں کھو گیا اور میری طبیعت میں لمحہ بہ لمحہ تبدیلی ہوتی رہی ۔
’’رحمت ِ دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ‘‘نبیلہ اکبر نے عرق ریزی سے مرتب کی ہے جس میں زندگی کے ہر موضوع کو اجاگر کیا گیا ہے ۔’’رحمت ِ دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ‘‘کتاب کے عنوانات ہی دیکھ لیجئے ۔سیرت طیبہ ،عدل و انصاف ،تعلیمات نبوی ؐ ،غیر مسلموں اور رعایا کے حقوق ،معاشیات ،عہد نبوی کا نظام تعلیم ،غزوہ بدر اور اسیران جنگ سے حسن سلوک اور فتوحات کے مقاصد اور منافقین وغیرہ ۔
’’رحمت ِ دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ‘‘کا پیش لفظ مختصر ہے جس میں نبیلہ اکبر لکھتی ہیں میری ماں ،میری سہیلی ،میری کل کائنات اور میری متاع حیات تھیں ۔ماں سے محبت کے اظہار کے ساتھ ساتھیوں اور ان دوستوں کا شکریہ ادا کرتی ہیں جنہوں نے ’’رحمت ِ دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ‘‘کتاب میں تدوین و ترتیب میں برابر کا ساتھ دیا۔محترمہ نبیلہ اکبر صاحبہ کی یہ پہلی کتاب ہے ۔نبیلہ اکبر کو میں نہیں جانتا تھا لیکن اس کتاب کو پڑھنے کے بعد ان کی شخصیت میرے سامنے واضح ہو گئی ہے ۔آپ دین دار اور اسوہ حسنہ پر عمل پیرا خاتون ہیں ۔آپ کا اسلوب سادہ اور عالم فہم ہے ۔آپ کا طرز نگارش عمدہ اور اعلی ہے ۔آپ کے لفظوں میں تاثیر ہے جو قاری کو اپنی گرفت میں لے لی ہے ۔نبیلہ اکبر نے قاری کے ذہن پر بوجھ نہیں ڈالا بلکہ خوشگوارگی پیدا کی ہے ۔
’’رحمت ِ دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ‘‘کتاب حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی زندگی کا مکمل احاطہ کیا ہوا ہے ۔اس سے پہلے جو بھی کتب میں نے پڑھی ہیں اس طرح کا اسلوب اور طرز تحریر نہیں ملا ۔نبیلہ اکبر نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی زندگی کا مختصر مگر جامع احاطہ کیا ہے جس میں آپ ؐ کا رہن سہن،بول چال ،حسن سلوک ،حسن اخلاق ،لباس کا زیب تن کرنا ،کھیل کود وغیرہ ۔یتیمی ،بارش کی دُعا ،بُری باتوں سے نفرت،بے مثل یاداشت ،عقل ِکامل اور حیاء ،تجارت ،نکاح ،حجرا اسود کی تنصیب نو،لباس میں سادگی ،بے پردگی سے حفاظت وغیرہ موضوع تحریر ہیں ۔یوں آپ کی پرورش سے لے کرپردہ فرمانے تک ،زندگی کے تمام بنیادی معاملات کو احاطہ تحریر میں لانے کی کوشش کی گئی ہے ۔
’’رحمت ِ دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ‘‘کتاب میں نبیلہ اکبر نے احادیث کوڈ کرتے ہوئے حوالے جات کم کم دئیے ہیں ۔تکرار لفظی سے بھی کام لیا گیا ہے ۔کہیں کہیں مکمل واقعہ ہی دوبارہ دے دیا گیا ہے ۔پروف ریڈر اور کمپوزر نے کوتاہی اور غفلت سے کام لیا ہے ۔یہی وجہ ہے کے کتاب میں غلطیاں موجود ہیں ۔اس کی مثال محترمہ نبیلہ اکبر صاحبہ کا پیش لفظ ہی دیکھ لیا جائے ۔یہ کتاب 112صفحات پر مشتمل ہے جو سفیداور اچھے کاغذ پر پرنٹ کی گئی ہے ۔بیک فلاپ پر نسیم الحق زاہدی اظہار خیال کچھ یوں کرتے ہیں ’’نبیلہ اکبر بڑی خوش نصیب اور مبارک باد کی مستحق ہے کہ جس نے قلم اٹھایا بھی تو اس پاک ذات کی شان میں جن پر اللہ تعالیٰ اور اس کے فرشتے ہمہ وقت درودوسلام بھیجتے ہیں ۔
آج عالم اسلام کی عجیب کیفیت ہے لوگ انصاف کے لیے دردر کی ٹھوکریں کھا رہے ہیں ۔حکمران اور بااثر طبقات قانون سے بالا تر ہیں ۔غریب آدمی اپنا حق حاصل کرنے کی استطاعت نہیں رکھتا ،جب حکمران خود کو قانون سے بالاتر سمجھنے لگیں تو پھر جس کی لاٹھی اس کی بھینس کا چلن عام ہو جاتا ہے ۔یہ صورت حال مسلمانوں کے لیے مصیبت کا باعث بھی ہے اور پوری امت مسلمہ کے نام پر ایک سیاہ دھبہ بھی ہے کہ محسن انسانیت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اپنے آپ کو جب احتساب کے لیے پیش کرتے ہیں ۔خلفائے راشدین اپنے آپ کو قانون سے بالاتر نہیں سمجھتے تو آج کے اس دورکے اندر ان کے نام لیوا بھی اپنے آپ کو قانون سے بالاتر نہ سمجھیں ۔اسی میں مسلمانوں کی اور ان کے امراء و حکماء کی کامیابی ہے ۔اللہ پاک ہمیں نبی پاک صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور اصحاب رسول کی سیرت و کردار کو اپنانے کی توفیق عطا فرمائے آمین !
اللہ تعالیٰ سے دعا گو ہوںکہ محترمہ نبیلہ اکبر صاحبہ کا قلم یونہی آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے سیرت و کردار پر اپنا حق ادا کرتے رہے اور آپ کوصحت و کاملہ کے ساتھ ہنستا ومسکراتا رکھے آمین ثم آمین !    





Comments


There is no Comments to display at the moment.



فیس بک پیج


اہم خبریں

تازہ ترین کالم / مضامین


نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2018 apkibat. All Rights Reserved